The nights are real, the days, lies

The nights are real, the days, lies

John Eliya

Scratch out my eyes if you will, I’ll never let go of my dreams

Neither their comforts nor their tortures will drive me to break my promises

New vistas do not dwell in the suburbs of the eyes

Must I also lose the treasures of my imagination?

Yes, my dreams detest the cold and shadowy implications of your mornings

Those mornings were only the shimmering and dizzying cycle of winter’s steam,

Of all of the suns that have ever been sold at evening’s counter

Like my night of dreams, burning, blazing nights

And each day of these icily condensed implications, is good and is true,

By which the blurry orbit of brilliance turns into a 360-degree illness

My darknesses are true, too

And your “albinism” is also a lie

The nights are real, the days, lies

As long as the days are lies, as long

Bear the nights and live in your dreams

They are better than dream-bleaching days

No, I won’t wrap myself in temptation’s fog

Scratch out my eyes if you will, I’ll still never let go of my dreams

I won’t break my promises

This is enough, it is my everything

The predation of months and years is my nemesis

Its reputation has been measured against my life

Let whatever happen, until my last breath let whatever happen

راتیں سچی ہیں، دن جھوٹے ہیں

چاہے تم میری بینائی کھرچ ڈالو پھر بھی میں اپنے خواب نہیں چھوڑوں گا
اِن کی لذت اور اذیت سے میں اپنا عہد نہیں توڑوں گا
تیز نظر نابیناؤں کی آبادی میں ،
کیا میں اپنے دھیان کی یہ پونجی بھی گنوا دوں
ہاں میرے خوابوں کو تمھاری صبحوں کی سرد اور سایہ گوں تعبیر
اِن صبحوں نے شام کے ہاتھوں اب تک جتنے سورج بیچے
وہ سب اک برفانی بھاپ کی چمکیلی اور چکر کھاتی گولائی تھے
سو میرے خوابوں کی راتیں جلتی اور دہکتی راتیں
ایسی یخ بستہ تعبیر کے ہر دن سے اچھی ہیں اور سچی بھی ہیں
جس میں دھندلا چکر کھاتا چمکیلا پن چھ اطراف کا روگ بنا ہے
میرے اندھیرے بھی سچے ہیں
اور تمھارے روگ اُجالے بھی جھوٹے ہیں
راتیں سچی ، دن جھوٹے
جب تک دن جھوٹے ہیں جب تک
راتیں سہنا اور اپنے خوابوں میں رہنا
خوابوں کو بہانے والے دن کے اجالے سے اچھے ہے
ہاں میں بہکاؤں کی دھند سے اڑھوں گا
چاہے تم میری بینائی کھرچ ڈالو میں پھر بھی اپنے خواب نہیں چھوڑوں گا
اپنا عہد نہیں توڑوں گا
یہی تو بس میرا سب کچھ ہے
ماہ و سال کے غارت گر سے میری ٹھنی ہے
میری جان پر آن بنی ہے
چاہے کچھ ہو میرے آخری سانس تلک اب چاہے کچھ ہو

About these ads

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s